گوریلوں کے تحفظ کے لئے اہم خوشخبری

رسائی نیوز ویب ڈیسک: 2008 میں گوریلوں کی تعداد 600 تھی جو اب بڑھ کر 1000 تک ہوچکی ہے۔ فطرت کے اس اہم اور حیرت انگیز جاندار کا شکار کیا جارہا تھا اور اس کا قدرتی مسکن سکڑ رہا تھا۔ اسی بنا پر بین الاقوامی ماہرین نے گوریلا گارڈز اور ڈاکٹروں کا گشت بڑھایا، شکار پر پابندیاں عائد کیں اور ان کے ماحول کو بچانے کی کوشش کی جس کے مثبت نتائج برآمد ہوئے ہیں۔ تیزی سے ناپید ہوتے ہوئے جانوروں پر بنائی جانے والی سرخ فہرست پر نظرثانی کے بعد دو بڑی وھیل کی تعداد میں بھی اضافہ دیکھا گیا ہے جن کے شکار پر سخت پابندی عائد کی جاچکی ہے جس کے بعد مغربی سرمئی وھیل اور فِن وھیل کی تعداد بڑھی ہے۔ مصر میں منعقدہ عالمی حیاتیاتی تنوع پر ہونے والی کانفرنس میں انٹرنیشنل یونین فار کنزرویشن آف نیچر کے سربراہ نے بتایا کہ گوریلا اور وھیل کی خبریں جانوروں کے تحفظ کی کوششوں کی افادیت ثابت کرتی ہیں۔ اس وقت گوریلے صرف تین ممالک میں موجود ہیں جن میں کانگو، روانڈا اور یوگینڈا شامل ہیں۔ تاہم شکار، خانہ جنگی اور فسادات اور انسانوں سے لگنے والے امراض ان کی بقا کےلیے اب بھی ایک خطرہ ہیں۔ البتہ ایک اور قسم کے بوزنے ’گریٹ ایپ‘ کی تعداد خاطر خواہ نہیں بڑھ سکی اور یوں وہ اب بھی معدومیت کے خطرے سے دوچار ہیں۔ اس موقع پر آئی یو سی این میں بوزنوں کے ماہر ڈاکٹرنے کہا کہ اگرچہ رقم جمع کرنے کےلیے گوریلا سیاحت کی اجازت ہے لیکن اس کی رہنما ہدایات پر سختی سے عمل کرنا ہوگا اور انسانوں کو گوریلا سے دور رکھنا ضروری ہے تاکہ کوئی انسانی بیماری انہیں متاثر نہ کرسکے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں