پنجاب حکومت کی جانب سے بسنت منانے کا اقدام لاہور ہائیکورٹ میں چیلنج کر دیا گیا

رسائی نیوز نمائندہ خصوصی لاہور: درخواست صفدر شاہین پیرزادہ ایڈووکیٹ کی جانب سے دائر کی گئی، جس میں درخواستگزار نے موقف اختیار کیا کہ بسنت خونی کھیل کی شکل اختیار کر گیا تھا جس کی وجہ سے پابندی لگائی گئی تھی۔ درخواست گزار کا موقف تھا کہ حکومت عوامی مسائل سے توجہ ہٹانے کیلئے خونی کھیل کی اجازت دے رہی ہے، ڈور پھرنے کے واقعات سے بے شمار قیمتی جانیں ضائع ہوئیں، لہذا عدالت حکومت کی جانب سے بسنت کی اجازت دینے کا اقدام کالعدم قرار دے-بسنت پر پابندی ختم کرنے کے حوالے سے وزیر اعلیٰ پنجاب اور وزیر قانون کو لیگل نوٹس جاری کر دیا گیا ہے قانونی نوٹس شہری میاں خلیل حنیف نے اپنے وکیل مدثر چوہدری کی وساطت سے ارسال کیا۔ نوٹس میں کہا گیا ہے کہ حکومت پنجاب 15 دنوں میں اپنا بیان واپس لے ورنہ ہائیکورٹ اور سپریم کورٹ سے رجوع کیا جائے گا، بسنت ایک خونی کھیل ہے جس پر سپریم کورٹ آف پاکستان نے پابندی لگائی، خونی کھیل میں کئی معصوم جانیں ضائع ہونے کا خطرہ ہے-

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں