ملک میں خسرہ کا مرض شدت اختیار کرگیا، 127 بچوں کا انتقال’ ویکسینیشن مہم کا آغاز 15 نومبر سے ہوگا

ملک میں خسرہ کا مرض شدت اختیار کرگیا اور گزشتہ سال کے مقابلے میں خسرہ سے بچوں کی اموات اور مرض میں 100 فیصد سے زائد اضافہ ہوگیا ہے۔ رواں سال ملک بھر میں خسرہ سے اب تک 127 بچے انتقال کر گئے ہیں جبکہ 8 ہزار سے زائد بچوں میں خسرہ کی تصدیق کی گئی ہے۔
خسرہ کے باعث سب سے زیادہ 45 بچے سندھ میں جاں بحق ہوئے۔ کے پی میں 39، بلوچستان 26 اور پنجاب میں17 بچے جاں بحق ہوئے ہیں۔

بلوچستان بھر میں خسرہ اور روبیلا سے بچاﺅ کیلئے 12 روزہ ویکسینیشن مہم کا آغاز 15 نومبر سے ہوگا۔ تفصیلات کے مطابق مہم کے دوران 56 لاکھ بچوں کو خسرہ سے بچاؤ کے ٹیکے لگائے جائیں گے جبکہ 56 لاکھ میں سے 13 لاکھ 50 ہزار بچے اسکولوں کے طلبا ہیں۔ مہم کے لیے 7000 ٹیمیں تشکیل دی گئی ہیں جو مہم میں حصہ لیں گی۔

خسرہ اور روبیلا وائرس سے پھیلنے والی بیماریاں کی علامات تیز بخار ، کھانسی ، نا ک ،انکھوں سے پانی بہنا اور دست سمیت دیگر علامات شامل ہیں یہ بیماریاں ان بچوں ، بچیوں اور حاملہ خواتین کیلئے خطرناک ثابت ہو سکتی ہیں جنہوں نے حفاظتی ٹیکہ جات نہیں لگوائے ۔

روبیلا کا دورانیہ تین دن تک ہوتا ہے البتہ یہ مرض نولود بچوں کو نابینا ، بہرہ اور دماغی طور پر مفلوج کرنے اور پیدا ئش کے بعد موت کی اغوش میں چلے جانے کا موجب بن رہا ہے ، یہ بیماری مریض کے کھا نسنے، چھینکنے سے دوسرے بچوں اورافراد میں منتقل ہو سکتی ہے ایک متاثرہ بچہ 200بچوں کو متا ثر کر سکتا ہے۔

کیٹاگری میں : صحت

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں