اقوام متحدہ مقبوضہ کشمیرمیں جعلی مقابلوں کے ذریعے کشمیریوں کے قتل عام کا نوٹس لے ،حریت کانفرنس

سرینگر۔:غیر قانونی طور پر بھارت کے زیر قبضہ جموں و کشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس نے مقبوضہ علاقے کے اطراف و اکناف میں بھارتی فوجیوں کی طرف سے مسلسل جاری جعلی مقابلوں میں نہتے کشمیریوں کے قتل عام پر سخت تشویش ظاہر کی ہے ۔

کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق حریت کانفرنس کے ترجمان نے سرینگر میں جاری ایک بیان میں سرینگر کے علاقے حیدر پورہ میں تین کشمیری تاجروں اور ایک ڈاکٹر کے حالیہ قتل کی شدید مذمت کرتے ہوئے کشمیری عوام کے خلاف اعلان جنگ کرنے پر فسطائی بھارتی حکومت پرکڑی تنقید کی۔

انہوں نے حیدر پورہ سرینگر کے شہدا کو شاندار خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ کشمیری عوام 1947 میں جموں و کشمیر پربھارت کے غیر قانونی فوجی قبضے کے بعد سے مسلسل بھارت کی طرف سے شروع کی گئی جنگ کا خمیازہ بھگت رہے ہیں۔

حریت ترجمان نے کہا کہ کشمیر کی مزاحمتی تحریک کی تاریخ ایسے لرزہ خیز جعلی مقابلوں سے بھری پڑی ہے جب بھارتی فوجیوں نے بے گناہ کشمیریوں کو بلا جواز بہیمانہ طورپر قتل کردیا۔انہوں نے نہتے کشمیریوں پر بھارتی ظلم و بربریت کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اس کا مقصد مقبوضہ علاقے میں خوف و دہشت کا ماحول قائم کرنا ہے تاکہ کشمیری عوام کو بھارتی فوجی طاقت کے سامنے سر تسلیم خم کرنے پر مجبور کیاجاسکے ۔

انہوں نے اقوام متحدہ کی انسانی حقوق کونسل ، ایمنسٹی انٹرنیشنل، ہیومن رائٹس واچ اور عالمی ریڈ کراس جیسی انسانی حقوق کی بین الاقوامی تنظیموں پر زور دیا کہ وہ بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں نہتے کشمیریوں کے قتل عام کے واقعات کا خود نوٹس لینے کیلئے مقبوضہ علاقے کا دورہ کریں۔

ترجمان نے مسلم اکثریتی ریاست جموں و کشمیر میں مسلمانوں کی نسل کشیُ کے مودی حکومت کی طرف سے اپنے مذموم عزائم کو عملی جامہ پہنانے کے لیے کشمیریوں کے حراست کے دوران اور جعلی مقابلوںمیں قتل کے واقعات کی تحقیقات جنگی جرائم کے عالمی ٹریبونل سے کرانے کا مطالبہ کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں